حال میرے دیس کا

باعمل مسلمانوں سے پیشگی معذرت

اقبال تیرے دیس کا کیا حال سناؤں
دہقان تومرکھپ گیا اب کس کوجگاؤں
ملتا ہے کہاں خوشہء گندم کہ جلاؤں
شاہین کا ہے گنبد شاہی پہ بسیرا
کنجشک فرومایہ کواب کس سے لڑاؤں

اقبال تیرے دیس کا کیا حال سناؤں
مکّاری و عیّاری و غدّاری و ہیجان
اب بنتا ہے ان چارعناصر سے مسلمان
قاری اسے کہنا تو بڑی بات ہے یارو
اس نےتوکبھی کھول کےدیکھا نہیں قرآن

اقبال تیرے دیس کا کیا حال سناؤں
بیباقی و حق گوئی سےگبھراتا ہے مومن
مکّاری و روباہی پہ اتراتا ہے مومن
جس رزق سے پرواز میں کوتاہی کا ڈر ہو
وہ رزق بڑے شوق سے کھاتا ہے مومن

اقبال تیرے دیس کا کیا حال سناؤں
جھگڑے یہاں صوبوں کے ذاتوں کے نصب کے
اگتے ہیں تہہ سایہء گل ۔ خار غضب کے
یہ دیس ہے سب کا مگر اس کا نہیں کوئی
اس کےتن خستہ پہ تو اب دانت ہیں سب کے

Advertisements

8 thoughts on “حال میرے دیس کا

  1. اسماء صاحبہ
    آپ کا اندازہ ٹھیک ہے ۔ نام میں تھوڑی سی تصحیح ۔ امیراسلام نہیں امیرالسلام ۔ امیرالسلام ہاشمی صاحب نے یہ شعر پنتیس سے زائد سال پہلے لکھے تھے ۔ اگر اب لکھتے تو اللہ جانے کیا لکھتے ۔

  2. Mr Green Head
    You are right. Hypocrisy has climbed up near to the top, not only in our country, but all over the world. We say something and do something else. This is what prompted me to start this blog. I had tried to desribe different forms of Hypocrisy in my first few months posts.

  3. Even after 35 years, its well set in current on-going scenario!!!

    Our sir read this nazm in our ending class of pak studies just in this may … and we were just wordless after hearinng it!!!

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s